The wife’s fear of Corona can prevent her husband from approaching

The wife's fear of Corona can prevent her husband from approaching

بیوی کورونا کے خوف سے خاوند کو قریب آنے سے روک سکتی ہے

ممتاز سعودی عالم دین ڈاکٹر عبداللہ بن محمد المطلق نے اپنے ایک تازہ ترین فتویٰ میں کہا ہے کہ اگر کوئی خاتون اپنے خاوند کو کورونا وائرس کے ڈر سے جسمانی طلب کی صورت میں قریب نہیں آنے دیتی، تو اسے شرعاً ایسا کرنے کی اجازت ہو گی۔ جبکہ ایسی خاتون پر بھی کوئی گناہ نہ ہو گا جو اپنے ہونے والے خاوند سے اس بناء پر شادی سے انکار کر دے کہ وہ موجود کورونا کی وبا کے دوران بھی خود کو گھر تک محدود نہیں رکھتا ہے۔
کیونکہ ایسے شخص کے کورونا سے متاثر ہونے کے امکانات بڑھ جاتے ہیں۔ سعودی سپُریم علماء کونسل کے اہم رُکن اور ایوانِ شاہی کے مشیر ڈاکٹر المطلق نے مسلمان مردوں کو تلقین کی کہ وہ خدا کا خوف کرتے ہوئے خود کو گھروں تک ہی محدود رکھیں تاکہ کورونا وائرس کے خدشے کے پیش نظر ان کی بیویاں اور گھر والے خوف اور پریشانی میں مبتلا نہ ہوں۔
ڈاکٹر المطلق سعودی ٹی وی چینل کے مذہبی پروگرام فتاویٰ میں عوام کے سوالات کا جواب دے رہے تھے، جب ایک خاتون کالر نے ان سے سوال کیا ”میرا خاوند کورونا کی موجودہ وبا کے دِنوں میں بھی گھر پر ٹِک کر نہیں بیٹھتا اور زیادہ وقت باہر ہی گزارتا ہے۔

اسے حکومتی احکامات کی بھی پرواہ نہیں ہے۔ جس کے باعث میں اپنی اور بچوں کی صحت اور زندگی کے حوالے سے بہت زیادہ فکر مند ہوں، یہاں تک کہ خاوند کے ساتھ سونا بھی ترک کر دیا ہے۔ کیا میں ایسا کر کے کسی گناہ کی مرتکب ہو رہی ہوں؟“ اس سوال کے جواب میں ڈاکٹر المطلق نے خاتون سے کہا ”آپ بالکل گناہ گار نہیں ہو۔ بلکہ آپ تو اپنی حفاظت کر رہی ہو ۔ کیونکہ یہی فرمانِ خداوندی ہے کہ اپنے آپ کو ہلاکت میں مت ڈالو۔
تمہارا رب بہتر رحیم ہے۔“ ڈاکٹر المطلق نے مزید کہا ”آپ خاوند کی بات (کورونا کے) خوف کی وجہ سے نہیں مان رہیں۔ اگر وہ آپ کی بات مان کر گھر پر بیٹھ کر اپنی جان کو محفوظ نہیں بناتا، تو آپ اپنی حفاظت کی خاطر خود کو اُس سے دُور ہی رکھیں۔ اگر وہ باز نہیں آتا تو کسی شُبہے کی صورت میں اُسے 14 روز کے لیے قرنطینہ میں منتقل کروا دیں۔“

شیخ المطلق نے وضاحت پیش کی کہ اگر کوئی خاوند اپنی بیوی بچوں اور خاندان کی صحت اور زندگیوں کے تحفظ کو نظر انداز کرتے ہوئے محافل اور اجتماعات میں شریک ہوتا ہے، تو پھر اس کی بیوی کو اس سے جسمانی دُور ی اختیار کرنے پر قطعاً کوئی گناہ نہیں ہو گا۔
ہم ایسے نادان خاوندوں کو تلقین کرتے ہیں کہ وہ اللہ سے ڈریں، کرفیو کی خلاف ورزی نہ کرتے ہوئے گھر پر ہی وقت گزاریں۔ تاکہ ان کی بیویوں اور گھر والوں کو ذہنی اذیت کا شکار نہ ہونا پڑے۔

 

The wife’s fear of Corona can prevent her husband from approaching Prominent Saudi scholar Dr. Abdullah bin Mohammed al-Mutlaq has stated in a recent fatwa that if a woman does not allow her husband to come close in the form of physical demand for fear of the Coronavirus, he will be allowed to do so. While there would be no sin for a woman who refuses to marry her future husband on the grounds that he does not restrict himself to the house even during the existing Corona epidemic.
Because such a person is more likely to be affected by corona. Dr. Muttalq, a key member of the Saudi Supreme Scholars Council and adviser to the royal court, urged Muslim men to confine themselves to their homes, fearing God, so that their wives and family would be intimidated by the Coronavirus. Don’t get in trouble
Dr. Al-Muttalq was responding to questions from the public on the Saudi TV channel’s religious program Fatwa when a female caller asked him “My husband does not stay home even in the days of Corona’s current outbreak and spends more time outside. Spends

The wife’s fear of Corona can prevent her husband from approaching He also doesn’t care about government orders. Due to which I am very worried about myself and my children’s health and life, even with my husband, I have given up sleeping. Am I committing a sin by doing so? ”In response to this question, Dr. Muttalq said to the woman,“ You are not a sinner at all. Rather, you are protecting yourself. Because it is the Lord’s command not to kill yourself.
Your Lord is the Most Merciful. “Dr. Al-Mutalq added,” You do not obey the husband because of the fear of (Corona). If he doesn’t listen to you and make himself safe at home, then keep yourself away from him for your protection. If he does not refuse, let him go to Quarantine for 14 days in case of anything. ”

Shaykh al-Mutlaq explained that if a husband participates in concerts and gatherings ignoring the protection of the health and lives of his wife, children, and family, then there is absolutely no way for his wife to take physical distance from him. There will be no sin.
We urge such ignorant husbands to fear God, to spend time at home not violating curfew. So that their wives and families do not have to suffer mentally.

About The Author

Related posts

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Need Help? Chat with us
%d bloggers like this: